ھوم پیج

انٹر نیٹ ہمارے معاشرے میں اس جابر حملہ آور کی طرح داخل ہوا ہے جس نے مغلوب کے لئے کوئی تیسرا راستہ نہیں چھوڑا۔ یا تو اسے اپنا کر اپنا مستقبل محفوظ کر لیا جائے یا پھر زوال کا زہر پی کر ماضی کی قبر میں خود کو زندہ در گور کر لیا جائے۔ ابتدا میں مجھے ان لوگوں پر غصہ آتا تھا جو اردو کی ترقی کی بات کرتے تھے لیکن انٹرنیٹ کو فضول سی چیز سمجھتے تھے لیکن اب مجھے ان پر ترس آتا ہے۔ اس لئے کہ ان ہی حضرات کے کلام یا مضمون کو جس شکل میں انٹرنیٹ پر پیش کیا جاتا ہے اس سے آپکے دل میں کوئی اور جذبہ پیدا نہیں س۔ آپ اس شخص کی بے بسی کا تصور کیجئے جو اس بات کی خبر ملنے پر کہ اس کے مضمون یا کلام کا بہت برا حشر ہوا ہے انٹر نیٹ کے موجد یا دور موجودہ کو لعنت ملامت کرے۔ حالانکہ یہ کام کی بورڈ پر انگلیوں کی جنبش بھر کا ہے۔ آپ ویب سائٹ کے ایڈمنسٹریٹر کو اپنی بات بتا دیں تاکہ وہ اس متن کو ویب سائٹ سے ہٹادے ، اس ویب سائٹ پر اپنے کومینٹس لکھ دیں یا پھر اپنے ذاتی صفحے پر جو آج کل بلاگ کی شکل میں عام ہے اپنی بات لکھ دیں۔

یہ بات دعوے کے ساتھ کہی جا سکتی ہے کہ ڈیجیٹل ورلڈ سے دور رہنا ایک نفسیاتی معذوری ہے جس کا خسارہ ہر حال میں اردو زبان و ادب کو اٹھانا پڑ رہا ہے۔

12 thoughts on “ھوم پیج

  1. Wikipedia ka unwaan to “Free encyclopedia” hai lekin ye sirf aur sirf aik makhsoos soch ki hi numaindagi karta hai aur azad bikul bhi nahin hai. Agar aam shakhs iss main koi tarmeem kare ya koi naya mazmoon likhe to khufia taqaton ke agent foran uss ko zail kar dete hain aur tehreer ko wapas apni purani likhi hoi shakal main bahal kar dete hain, iss baat se qata nazar ke wo kitni mustanad tarmeem thi. Agar tehreer unn ki marzi ki nahin to ghair mustanad qarar dekar foran uss ka qala qama kar dia jata hai. Wikipedia ko dunia ki aankhon main dhool jhonkne ke liye istemal kia jata hai khas tor par musalamano ke, aur ye website dunia ko warghalane ka kaam ilm ki aar lekar ba khoobi kar raha hai. Iss liye meri tamam zishaoor aur haqiqat pasand logon se ye darkhwast hai ke Wikipedia main di gai maloomaat par bharosa na karen aur asal main azad zarae ko apne ilm ka sarchishma banaen, warna gumrahi aap ka muqadar ban jaye gi, kunke taghooti quwaten iss ko azad ka naam dekar baghair kisi zimmedari ke logon ke samne ghalat maloomat pesh kar rahi hain, aur bari asani se iss agende ko takmeel tak pohnchana rahi hain

  2. Salam.. good effort and very nice article. i was searching for some good articles and some good URDU websites, suddenly i found very unique kind of WEBSITE and that is http://www.urdudigest.pk i found that that is one of the best urdu website i have ever seen. the outlook, articles, stories, font.. everything. you must visit and check out.. i think that is new one but awesome.

    • سلام
      ہم نے آپ کی پسندیدہ ویب سائٹ بلاگ پر ڈال دی ہے اور آپ کے مشورے کے لئے آپ کا شکریہ ادا کرتے ہیں۔

    • یہ سوال ہر اس شخص کے دماغ میں گھومتا ہے جو ادب اور فن کے شعبے سے جڑا ہوا ہے۔ غور کرنے پر ادب کی اہمیت کا احساس ہوتا ہے۔ دراصل اس دور صارفیت یا دور مادیت میں ہم مشین کی طرح کام کرنے پر مجبور ہیں اور ہر ادمی ٹارگٹ کو پورا کرنے کے چکر میں پڑا ہوا ہے لیکن اس دوڑ میں اس کی انسانی صفات اس سے الگ ہو تی جاتی ہیں۔ پھر ایک ایسا دور آتا ہے جب وہ شدید اضطراب اور تشنج کی کیفیت میں مبتلا ہو جاتا ہے اور تب اسے تسکین روح کا سامان درکار ہوتا ہے۔ ایسے میں وہ یا تو کسی مذہب کی پناہ میں جاتا ہے یا پھر ادب میں اپنے درد کا درماں تلاش کرتا ہے۔ ہاں یہ بات ضرور ہے کہ ادب نہ تو گندم سے بننے والی روٹی کا بدل ہے اور نہ ہی کسی ایندھن کا جس کے لئے آج دنیا لڑتی پھر رہی ہے۔

  3. Jis tarhan aap ne bataya k is internet se ya to aap zawaal pe pohanch sakte hain ya phir apna mustaqbil sanwaar saktey hain. Meri maghribi mulk mei rehaiesh hai, aur yahan urdu zaban se doori roz ba roz nazar aati hai. Pakistani apas mei bhi shayad kabhi kabhi urdu bolney mei sharm mehsoos karte hain. Ye na sirf dekh k kabhi kabhi dukh hota hai balkey afsos bhi hota in bachon k Ma Baap per. Na janey ye kesa mahoul hai. Mujhe Pakistan se bahir rahay huay kaafi time guzar gaya hai, meri urdu bhi kuch itni khaas nahi, aur mein bhi yeh socha karti thi k yeh koi itni ehmiyat bhi nahi rakhti. Lekin jese jese waqt guzarta jata hai, aqal mei yeh baat aati hai k zabaan he insaan ki pehchaan hai aur yeh pehchaan hum se kafi door hoti hui nazar aa rahi hai. Na sirf zabaan balkey ab to hamara culture bhi tabahi ki taraf gaamzin hai. Isay kese sudhaara jai? kese apne un bachone ko un ki pehchaan bataye jaye aur na sirf bataye jai balkey samjhaye jai.

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s